وائٹ پگڑی کے سامنے وائٹ ہاؤس جھگ گیا

0 216

دوحہ(رپورٹر) میں امریکہ اور افغان طالبان کے درمیان تاریخی امن معاہدے پر دستخط کر دیے گئے ہیں۔ امریکہ کی جانب سے زلمے خلیل زاد جبکہ طالبان کی طرف سے ملا عبدالغنی برادر نے دستخط کیے۔۔امریکہ اور طالبان کے درمیان معاہدے پر دستخط کی تقریب دوحہ کے شیریٹن ہوٹل میں ہوئی جہاں 30 ممالک کے وزرا، نمائندے اور یورپی یونین کے ارکان موجود تھے۔معاہدے کے مطابق امریکہ اور طالبان افغان فریقین کے مابین مذاکرات سے پہلے ہزاروں قیدیوں کا تبادلہ کریں گے۔ افغان فریقین کے مابین امن مذاکرات کا آغاز 10 مارچ سے ہو گا۔دوحہ میں افغانستان میں قیام امن کے لیے تاریخی معاہدے پر دستخط کے موقعے پر امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو بھی موجود تھے۔مائیک پومپیو نے معاہدے پر دستخط سے قبل خطاب کرتے ہوئے کہا کہ طالبان القاعدہ سے تعلقات ختم کرنے کے وعدے کی پاسداری کریں۔ان کا کہنا تھا کہ اگر تشدد میں کمی کے معاہدے پر قائم رہیں گے تو کامیابی ہوگی، اگر نہیں رہیں گے تو یہ ناکامی ہوگی۔انہوں نے کہا کہ گذشتہ سات دنوں کے دوران افغانستان میں پر تشدد واقعات میں کمی دیکھی گئی ہے’اگر ایک ہفتے میں امن برقرار رکھنے کے لیے کوششیں کی جا سکتی ہیں تو اس کا مطلب ہے کہ سب امن چاہتے ہیں۔ان کے بعد افغان طالبان کی جانب سے معاہدے پر دستخط کرنے والے ملا عبدالغنی برادر نے خطاب کیا اور کہا کہ کامیاب مذاکرات اور معاہدہ افغانوں اور دنیا کے اچھا ہے۔ملا عبدالغنی برادر نے کہا کہ ’ہم اس معاہدے کی پاسداری کریں گے، ہم سب کے ساتھ مثبت تعلقات چاہتے ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ ’افغانستان میں امن کے لیے قطر اور پاکستان کی کوششوں کے لیے ان کا شکریہ ادا کرتے ہیں۔جس ہال میں معاہدے پر دستخط کیے گئے وہاں ایک بڑا سٹیج بنایا گیا تھا جس پر صرف دو نشستیں ہی لگائی گئی تھیں جہاں دونوں جانب سے وہ رہنما بیٹھے جنہوں نے معاہدے پر دستخط کیے۔ہال میں موجود لوگ خوش اور پرجوش تو ہیں ہی تاہم ان میں خدشات بھی پائے جاتے ہیں۔ بعض افغانوں کو اس معاہدے کے حوالے سے شکوک و شبہات ہیں کہ آیا یہ معاہدہ چل بھی پائے گا یا نہیں۔تاہم طالبان مذاکراتی ٹیم کے رکن مولوی شہاب الدین دلاور نے بتایا ہے کہ اس معاہدے کے بعد اگلا قدم افغانستان میں طالبان قیدیوں کی رہائی ہو گا۔انڈپینڈنٹ اردو کے سوال کے جواب میں مولوی شہاب الدین نے کہا کہ وہ آج کی اس تقریب کے لیے کیے گئے انتظامات سے مطمئن ہیں۔انہوں نے بتایا کہ ان قیدیوں کی رہائی کے بعد ہی انٹرا افغان مذاکرات کا آغاز کیا جائے گا۔اس سے قبل افغانستان میں طالبان اسلامی تحریک کے سابق سفارت کار ملا عبدالسلام ضعیف کا کہنا تھا کہ امریکہ کے ساتھ طالبان کا معاہدہ ان کی بڑی کامیابی ہے کیونکہ وہ اپنی امارت (حکومت) کے دعوے سے دستبردار نہیں ہوئے۔دوحہ، قطر میں انڈپینڈنٹ اردو کے ساتھ ایک خصوصی انٹرویو میں طالبان دورہِ حکومت کے اسلام آباد میں سابق سفیر ملا عبدالسلام ضعیف کا کہنا تھا کہ طالبان نے اب تک جو بات چیت کی ہے وہ افغانستان اسلامی امارت کے نام سے کی ہے اور جو معاہدہ ہو رہا ہے وہ بھی اسی نام سے ہو گا۔’طالبان اپنی امارت سے دستبردار نہیں ہوئے۔ جب وہ امارت پر ڈٹے ہوئے ہیں تو دوسری کسی حکومت کا وجود نہیں مان سکتے۔‘خیال رہے کہ امریکہ اور افغان طالبان کے درمیان 19 سال کی جنگ اور خونریزی کے بعد یہ امن معاہدہ ہوا ہے۔اس موقع پر کابل میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے افغان صدر اشرف غنی نے امریکہ اور امریکی وزیردفاع کا شکریہ ادا کیا ہے۔اشرف غنی نے کہا ہے کہ وہ پاکستان اور دیگر برادر ممالک کے تعاون کو قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہیں۔

Facebook Comments