پولیس کے ہاتھوں بے گناہ طالبعلم کا بہیمانہ قتل سراسر ظلم زیادتی ہے،لواحقین

0 251

ہنگو۔( بیورورپورٹ)ہنگو دربند کا رہائشی طالب علم قتل۔مقتول طالب علم نسیم کو رات گئے کوہاٹ پولیس نے گھر سے گرفتار کیاتھا اور علی الصبح لاش تحصیل ہیڈکوارٹر ہسپتال ہنگو میں پڑی رہنے کی اطلاع ملی۔لواحقین کا میت مین چوک میں رکھ کر علاقہ عوام کے ہمراہ شدید احتجاج۔میں روڈ گھنٹوں تک بلاک۔مقتول طالب علم نسیم کو بے گناہ پولیس حراست میں کوہاٹ پولیس نے قتل کیاہے ملوث پولیس اہلکاروں کے خلاف قتل کا مقدمہ درج کیا جائے لواحقین کا الزام اور مطالبہ۔تفصیلات کے مطابق جمعہ کے روز ہنگو کے نواحی علاقہ دربند کے رہائشی طالب علم نسیم کے قتل کے خلاف ورزی نے علاقہ مکینوں کے ہمراہ لاش مین چوک ہنگو میں رکھ کر روڈ کو کئی گھنٹے بلاک کرتے ہوئے احتجاج کیا۔اس موقع پر مقتول نسیم ولد حاجی سلیم کے ورثاء محمد سلیم دیگر نے الزام عائد کیا کہ گزشتہ شپ کوہاٹ پولیس نے ہنگو سٹی پولیس کے ہمراہ بلاوجہ چھاپہ مار نسیم کو گرفتار کرکے ساتھ لے جاکر بعدازں فائرنگ سے قتل کیا جبکہ مقتول کی لاش ڈسٹرکٹ ہسپتال ہنگو سے وصول کرنے کی اطلاع کردی گئی ورثاء کا کہناتھا کہ کوہاٹ پولیس کے ہاتھوں بے گناہ نوجوان طالب علم نسیم کا بہیمانہ قتل سراسر ظلم زیادتی ہے حکومت بالخصوص پولیس کے اعلی حکام واقعہ کی اعلی سطح تحقیقات کراتے ہوئے ورثاء کو انصاف فراہم کریں۔دریں اثناء ضلعی انتظامیہ کے افسران علاقہ مشران کے مظاہرین سے مذکرات کاسلسلہ بھی جاری رھا۔

Facebook Comments