پختون سٹوڈنٹس فیڈریشن نے آن لائن تعلیم کی مخالفت کردی

0 109

پشاور(سٹی رپورٹر) پختون سٹوڈنٹس فیڈریشن نے آن لائن تعلیم کی مخالفت کرتے ہوئے تعلیمی اداروں کو کھولنے کا مطالبہ کیا ہے۔ فیڈریشن کے صوبائی چیئرمین جمشید وزیر‘ جنرل سیکرٹری سہیل اختر‘ اسلامیہ کالج کے چیئرمین نعمان شیر‘ ایگریکلچر یونیورسٹی کے سینئر نائب صدر توقیر احمد‘ چیئرمین ڈسٹرکٹ پشاور سلمان نشنلسٹ‘ جنرل سیکرٹری سوات طارق باغی‘ چیئرمین چارسدہ ذیشان پختون یار اور مرکزی رہنماء اعجاز یوسفزئی نے مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ تعلیم صوبائی سبجیکٹ ہے تعلیمی پالیسی مرکزی حکومت کی طرف سے جاری کرنا غیر ذمہ دارانہ رویہ اور اٹھارویں ترمیم کی خلاف ورزی ہے۔ انہوں نے کہا کہ کورونا کے لاک ڈاؤن کی وجہ سے تمام طلباء کے فیسوں کو معاف کیا جائے حکومت آن لائن کلاسوں کے شروع ہونے سے پہلے نیٹ ورک کی سہولت طالبعلموں کو فراہم کرے اور خصوصاً ضم اضلاع میں تھری جی اور فور جی نیٹ ورک فعال کیا جائے یا ضم اضلاع سمیت دور درازعلاقوں کے طلباء کیلئے ہاسٹل کی سہولت کا بندوبست کیا جائے بصورت دیگر ہم آن لائن کلاسوں کو مسترد کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں کورونا وباء کے باعث لاک ڈاؤن تھا جو تقریباً ختم ہو گیا ہے جس کے تحت بازاریں اور تمام شعبہ جات کھل چکے ہیں مگر اس کے باوجود تعلیمی ادارے بند کرنا سمجھ سے بالاتر ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ سٹوڈنٹس یونینز کو فوری طور پر فعال کیا جائے تاکہ طلبہ کو درپیش مسائل فوری طور پر حل کئے جاسکیں۔ انہوں نے کہا کہ صوبے کے تمام یونیورسٹیوں میں مستقل سٹاف کے ساتھ مستقل وائس چانسلروں کی تقرری کی جائے اور طلبہ کو ہراساں کرنے کے واقعات کو کسی صورت برداشت نہیں کیا جائیگا۔

Facebook Comments