خیبرپختونخوا حکومت بل جمع کرانے کیلئے حکمت عملی نہ بنا سکی

0 115
پشاور (پیام خیبرنیوز) کورونا وائرس کے باعث ملک بھر میں لاک ڈاؤن ہونے کے باوجود خیبر پختونخوا حکومت بل جمع کرانے کیلئے حکمت عملی نہ بنا سکے۔ شہری لائنوں میں لگنے پر مجبور ہو گئے۔ تفصیلات کے مطابق کورونا وائرس سے حفاظتی انتظامات کرتے ہوئے وفاقی حکومت نے ملک بھر میں لاک ڈاؤن کردیا گیا۔ چاروں صوبائی حکومتوں کی جانب سے بھی لوگوں کو گھروں میں رہنے کی ہدایت کی گئی ہے۔پنجاب اور سندھ میں نماز باجماعت ادا کرنے پر پابندی عائد کر دی گئی ہے تاکہ کورونا وائرس سے بچا جا سکے۔ تاہم خیبر پختونخوا میں لوگوں کو بل جمع کرانے کیلئے لائن میں لگا دیا گیا، لائن میں کھڑے بزرگ شہریوں کے کورونا وائر س سے متاثرہ ہونے کا خدشہ ہے۔شہریوں کاکہنا ہے کہ جان اللہ کے ہاتھ میں ہے بل تو دینا ہی ہونگے ورنہ جرمانہ بھرنا پڑے گا۔خیبر پختونخوا میں جزوی طور پر لاک ڈاؤن کیا جائے گا۔ شہریوں کا کہنا ہے پہلے بل جمع کرائیں گے پھر دیکھیں گے اپنی جان کا کیا سوچنا ہے۔واضح رہے کہ صوبہ خیبر پختونخوا میں کورونا وائرس سے جاں بحق افراد کی تدفین کا طریقہ کار وضع کیا گیا تھا۔میتوں کی منتقلی، غسل اور تدفین کے لیے خصوصی ٹیمیں تشکیل دی جائیں گی۔میتوں کو اسپتال میں ہی غسل دے کر پلاسٹک شیٹ میں لپیٹ کر تابوت میں بند کیا جائے گا۔میں توں گھر لے جانے کی اجازت نہیں ہوگی اور لواحقین اسپتال میں مریض کا آخری دیدار کر سکیں گے۔میت کو غسل دینے والا پانی بھی باہر سیورج میں نہیں بہایا جائے گا۔کورونا سے جاں بحق افراد کی میتیں خصوصی گاڑیوں کو اسپتال سے براہ راست قبرستان منتقل کی جائیں گی۔اس حوالے سے جاری کردہ مراسلے میں مزید کہا گیا ہے کہ غسل اور تدفین کرنے والے افراد ماسک، دستانے اور دیگر ضروری اشیاء کا استعمال کریں۔ تاہم کورونا وائرس سے متعلق سخت اقدامات اٹھانے کے باوجود حکومت نے عوام کو بل جمع کرانے کیلئے کوئی سہولت فراہم نہ کی بینک کے باہر بل جمع کرانے کے لئے لگی لمبی لائنیں عوام کیلئے خطرے کا باعث بن گئی ہیں۔
Facebook Comments