گورنر اسٹیٹ بینک نے قرض دہندگان کو خوشخبری سُنا دی

0 76

اسلام آباد(نیوز ڈیسک ) گورنر سٹیٹ بینک نے قرضوں پر سود کی معافی کا اشارہ دے دیا ہے۔قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی اجلاس میں اراکین کمیٹی نے کہا ہے کہ کورونا وائرس کی وجہ سے کاروبار بہت متاثر ہوئے ہیں اس لئے حکومت کو قرض معاف کرنے چاہیے۔۔گورنر اسٹیٹ بینک رضا باقر نے قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی اجلاسمیں کہا کہ اگر حکومت چاہے تو سود معاف کر سکتی ہے ، جس کے لیے سبسڈی دینا پڑے گی۔گورنر سٹیٹ بینک نے مزید کہا کہ سود کی معافی اور سبسڈی کے معاملے پر غور جاری ہے ۔منگل کو فیض اللہ کموکا کی زیر صدارت قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی خزانہ کا اجلاس ہوا جس میں گورنر سٹیٹ بنک رضا باقر نے ویڈیو لنک کے ذریعے اقدامات پر بریفنگ دی ۔ گور نر اسٹیٹ بینک نے کہاکہ کرونا وائرس کے پیش نظر سٹیٹ بنک نے معاشی صورتحال کو مدنظر رکھتے ہوئے ریلیف دیا ،گزشتہ دو ہفتوں میں ایک کھرب روپے کے قرضوں کی مدت بڑھائی گئی ۔گورنر اسٹیٹ بنک نے کہاکہ قرضوں پر سود کی ادائیگی میں بھی مہلت دی گئی ،جو کمپنیاں اپنے ملازمین کو نوکری سے فارغ نہیں کریں گی ان کے لئے پانچ فیصد تک شرح سود پر قرض کی سکیم ہے ۔ انہوںنے کہاکہ پندرہ دنوں میں کمپنی کو قرض ادا کیا جاتا ہے ،اگر کسی کمپنی کو قرض نہیں مل رہا تو اسٹیٹ بنک سے رجوع کیا جا سکتا ہے ۔رضا باقر نے کہاکہ شرح سود میں 4.25 پوائنٹس کی کمی کی گئی ہے ،دنیا میں سب سے زیادہ شرح سود پاکستان میں کم کی گئی ،مختلف دیگر اقدامات بھی زیر غور ہیں ۔رکن کمیٹی علی پرویز ملک نے کہاکہ وزیر اعظم ریلیف پیکیج بہت بڑا نہیں ہے ،وزیر اعظم ریلیف پیکیج 500 ارب روپے سے زیادہ نہیں ہے ۔ علی پرویز ملکننے کہاکہ وزیر اعظم ریلیف پیکیج میں گندم کی خریداری کو بھی شامل کردیا گیا ہے،ایکسپورٹرز کے ٹیکس ری فنڈز کو بھی ریلیف پیکیج میں شامل کیا گیا ہے،کورونا وائرس کی وجہ سے کاروبار کو بہت نقصان ہوچکا ہے،عالمی منڈی میں تیل کی قیمت 30 ڈالر فی بیرل سے نیچے آ گیا ہے،حکومت بتائے پیٹرولیم ڈویلپمنٹ لیوی میں کمی ہوگی یا نہیں،حکومت کو آوٹ آف بجٹ سپورٹ پیکیج جاری کرنا ہوگا۔سیکرٹری خزانہ نوید نے کامران بلوچ کی وزیر اعظم ریلیف پیکیج کے حوالے سے بریفنگ دیتے ہوئے کہاکہ وزیر اعظم کے ریلیف پیکیج میں این ڈی ایم اے کیلئے 25 ارب روپے رکھے گئے ہیں، 100ارب روپے کا ایمرجنسی فنڈ قائم کیا گیا ہے، 150 ارب روپے کا پیکیج نادار افراد کیلئے رکھا گیا ہے جس میں سے 6 ارب روپے پناہ گاہ کیلئے مختص ہے، 144ارب روپے نادار خاندانوں کو نقد دیئے جارہے ہیں، 50ارب روپے یوٹیلیٹی اسٹورز کارپوریشن کیلئے مختص کئے گئے اور اس میں سے 10 ارب روپے جاری کردئیے گئے ہیں ۔

Facebook Comments