بھارت اخلاقی طور پرجموں و کشمیر میں اپنی جنگ ہار چُکا ہے‘ سید علی گیلانی

0 180

سرےنگر(پیام خیبر نیوز)مقبوضہ کشمیر میںکل جماعتی حرےت کانفرنس کے چےئرمےن سید علی گیلانی نے کہاہے کہ بھارت اخلاقی طورپر جموںو کشمیر میں اپنی جنگ ہار چُکا ہے اس لیے وہ انتقامی کارروائےوںکے ذرےعے معصوم شہرےوںکے جان ومال کو نقصان پہنچانا اپنا قومی فریضہ سمجھتا ہے۔ کشمےر مےڈےا سروس کے مطابق سےد علی گےلانی نے سرےنگر مےں جاری اےک بےان مےں ضلع کولگام مےں بھارتی فورسز کے ہاتھوںشہےد ہونے والے نوجوانوں زےنت الاسلام اور شکےل احمد ڈار کو شاندار خراج عقےدت پےش کرتے ہوئے کہا کہ ہمارے یہ سرفروش اپنی قوم کو غیر ملکی فوجی قبضے سے آزادی دلانے کے لیے اپنی جانےں قربان کررہے ہیں اورقوم پر یہ ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ ان کے مقدس مشن کو ہر صورت مےں جاری رکھاجائے۔ انہوں نے شہداءکے جنازوں میں شرکت کرنے والوںپر بھارتی فوج اور پولیس کی ےلغار اور اےک خاتون سمےت درجنوں افر۱د کو زخمی کرنے کی شدید مذمت کی۔ حریت چیئرمین نے کہاکہ شہداءکے جنازوں میں شرکت کرنے والوں پر تشدد کرکے بھارت نے انتہائی بزدلی اور انتقامی کارروائی کی بدترین مثال قائم کرکے اقوامِ عالم میں خود کو رسوا کیا ہے۔ انہوں نے کہاکہ ایسا غیر اخلاقی اور غیر انسانی رویہ دنیا کے کسی کونے میں روا نہیں رکھا جارہا ہے، لیکن بھارتی سامراج، اس کی سفاک فوج اور اس کے مغرور حکمران ایسا کرنے میں فخر محسوس کرتے ہیں۔ بھارت کے زوال اور پستی کا اس سے زیادہ اور کیا ثبوت ہوگا کہ اتنی بڑی فوجی قوت اور جدید سازوسامان سے لےس ہونے کے باوجود شہداءکی مےتوںسے بھی خوفزدہ ہوکر بدحواس ہوجاتی ہے۔انہوں نے کہاکہ یہ ہماری تحریک کی اخلاقی برتری اور مبنی برصداقت ہونے کا جیتا جاگتا ثبوت ہے۔انہوں نے کہاکہ ہمارے نو جوان ہماری تحریک میں ہر اول دستے کے طور پر اپنی خداداد صلاحیتوں کا لوہا منوارہے ہیں۔سےد علی گےلانی نے کہاکہ قابض طاقتیں چاہے کوئی بھی حربہ استعمال کریں انہیں ناکام اور نامراد ہی ہونا پڑے گا۔حرےت چےئرمےن نے لواحقین سے ےکجہتی اور ہمدردی کا اظہار کرتے ہوئے شہداءکے لےے بلندی درجات کی دعا کی۔درےں اثناءحرےت چےئرمےن نے سینئر آزادی پسند رہنما غلام محمد خان سوپوری کی دوران حراست علالت پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہاہے کہ ہمارے کارکن جب جیلوں میں قریب المرگ ہوجاتے ہیں تو اخلاق اور انسانیت سے عاری ظالم حکمران انہیں نیم مردہ حالت میں گھروالوں کے سپرد کرتے ہیںتاکہ وہ اُن کے علاج ومعالجے اور انسانیت سوز برتاو¿ پر تنقید سے بچ جائیں۔انہوں نے کہا کہ خان سوپوری کو پہلے اپنے گھر سے بے دخل کرکے ذہنی اور جسمانی اذیت میں مبتلا کردیا گیا پھر گرفتار کرکے ریاست سے باہر منتقل کرکے اُن کے اہلخانہ کو معاشی اضطراب میں مبتلا کردیا گیا۔ انہوں نے کہاجیل میں علاج ومعالجے کی سہولت فراہم نہ کرنے کی وجہ سے جب اُن کی صحت تشویش ناک حد تک بگڑ گئی تو انہےںرہا کرکے گھروالوں کے حوالے کیا گیا۔

Facebook Comments