صوبے کے36 ہسپتالوں کو ضروری حفاظتی سامان بھیج دیا گیا،پی ڈی ایم اے

0 102
پشاور (پیام خیبر نیوز)کوروناوائرس سے نمٹنے کیلئے صوبے کے36ہسپتالوں کوضروری سامان فراہم کر دیا گیا۔این ڈی ایم اے کے تعاون سیموصول شدہ سامان میں 4497 این 95ماسک متعلقہ ہسپتالوں کوبھیج دیے گئے۔تفصیلات کے مطابق تمام ہسپتالوں کو مجموعی طور پر 71624 سرجیکل فیس ماسک اور 63577 دستانوں کے ساتھ دیگرحفاظتی سامان جس میں 8470حفاظتی سوٹ،1952 گاؤن،1280 حفا ظتی عینکیں اور 4386 شوزکور مہیا کر دیے گئے ہیں۔ ڈی جی پی ڈی ایم اے کے مطابق ہسپتالوں کو حفاظتی سامان کی فراہمی این ڈی ایم اے کے واضع کر دہ طر یقہ کا ر کے مطابق کی جارہی ہے۔ پی ڈی ایم اے نے مجموعی طورپرتین لاکھ دس ہزارمختلف قسم کے فیس ماسک،780 لیٹرسینیٹائزر،8400 پر سنل حفاظتی کٹس،54،000 دستانے ضلعی انتظامیہ کو قرنطینہ مراکز اورمتعلقہ محکموں کے لئیبھیجی ہیں۔جبکہ 1650 حفظان صحت ساز کٹس، 19500 سرجیکل کیپس، 8000 بستر، 830 لیٹر کلورین بھیجی گئیں ہیں۔جبکہ مزید سیفٹی کٹس اور آلات بھی متعلقہ محکموں کو روانہ کیے جائیں گے۔ کورنا وائرس کے ممکنہ پھیلاؤ کو روکنے اور معاشرتی و سماجی فاصلوں کے پیش نطر پی ڈی ایم اے میں  قائم ایمرجنسی آپریشن سنٹر میں ریموٹ کال منیجمنٹ سسٹم متعارف کرا دیا ہے. عوام کی رہنمائی اور سماجی رابطوں میں آسانی کے لیے  پی ڈی ایم کی ایمرجنسی ہیلپ لائن 1700 کا دائرہ کار وسیع کر دیا گیا ہے. جس کے تحت کورنا وائرس سے بچاؤ کے خلاف مصروف عمل فرنٹ لائن محکموں کے نمائندے پی ڈی ایم اے کی ہیلپ لائن1700 پر عوام کی رہنمائی کے لیے  ہمہ وقت موجود ہیں.پی ڈی ایم اے کی جانب سے متعارف کردہ کال منیجمنٹ سسٹم پر موجود مختلف محکموں کے نمائندے گھر بیٹھے بھی عوام کی رہنمائی کے لئے ھیلپ لائن سے منسلک رہیں گے تاکہ عوام کو بروقت بہتر معلومات فراہم کی جا سکیں. عوام پی ڈی ایم اے کی ٹول فری ہیلپ لائن1700 پر کورنا سے متعلق معلومات، ڈاکٹروں، ادویات،  تحفظ اطفال و خواتین، ایمرجنسی سروس، ریسکیو 1122، سول ڈیفنس، پاکستان سیٹیزن پورٹل اور دیگر اہم محکموں کے نمائندوں سے بآسانی رابطہ کر کے رہنمائی حاصل کر سکتے ہیں.پی ڈی ایم اے کی جانب سے قائم کردہ ریموٹ کال منیجمنٹ سسٹم کا مقصد موجودہ صورتحال میں کورنا وائرس کے ممکنہ پھیلاؤ کو روکنے کے لیے معاشرتی و سماجی فاصلوں کو برقرار رکھتے ہوئے عوام کو گھر بیٹھے مختلف امور سے متعلق بر وقت معلومات و رہنمائی  فراہم کرنا ہے.
Facebook Comments