آسٹرالوجسٹ سامعہ خان نے بڑا دعویٰ کر دیا

0 123

لاہور (ویب ڈیسک) آسٹرالوجسٹ سامعہ خان نے امید ظاہر کی ہے کہ مئی کے آخر تک زندگی معمول کے مطابق چلنا شروع ہو جائے گی، 2020میں ہمارا اندازہ تھا کہ ملک میں ترقی نہیں ہوگی بلکہ دنیا ایک بحران سے گزرے گی ۔ نجی ٹی وی چینل سے گفتگو کرتےہوئے سامعہ خان کا کہناتھا کہ اگرکورونا فروری کے آغاز میں پاکستان آتا تو تباہی زیادہ ہوتی۔ امید ہے مئی کے آخر تک زندگی معمولات کے مطابق چلنا شروع ہوجائے گی ۔19دسمبر تک مشکلات ہیں لیکن اس کے بعد آسانیاں پیدا ہوں گی ۔ ٹیروکارڈریڈرعالیہ نذیرنے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان میں 15مئی کے بعد حالات بہتر ہونا شروع ہوجائیں گے ۔جون جولائی میں لوگ سمجھیں گے کہ کورونا جا چکا ہے لیکن ستمبر میں یہ پھر آ سکتا ہے ۔البتہ پاکستان کاوقت شروع ہوچکا ہے ۔2020کے بعد زمین خزانے اگلے گی ،معیشت مضبوط ہوگی ۔انڈیا اور پاکستان کے درمیان تعلقات مزید سرد ہوسکتے ہیں ۔ٹیروکارڈریڈرعالیہ نذیرنےکہا کہ 2020کے بعد زمین خزانے اگلے گی ،معیشت مضبوط ہوگی،انڈیا اور پاکستان کے درمیان تعلقات مزید سرد ہوسکتے ہیں ۔ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق لاہور کے قبرستان میانی صاحب کے گورکنوں نے کورونا سے جاں بحق افراد کی تدفین کرنے سے انکار کر دیا۔گورکن کا کہنا ہے کہ جو کٹس دی گئی ہیں اس سے ہم محفوظ نہیں ہیں۔کورو نا بہت خطرناک بیماری ہے اور ہم اس وقت تک اس کے قریب نہیں جاسکتے جب تک ہمیں مکمل تحفظ اور حفاظتی لباس فراہم نہ کیا جائے۔اگر حکومت ہمیں حفاظتی کٹس فراہم کرتی ہے تو پھر ہم ضرور کام کریں گے۔ قبل ازیں بتایا گیا کہ کورونا وائرس پر توجہ کے باعث دیگر امراض میں مبتلا مریض علاج معالجے سے محروم ہوگئے ہیں۔یہی وجہ ہے کہ دیگر امراض سے اموات میں اضافہ ہونے سے لاہور کے سب سے بڑے میانی صاحب قبرستان میں صرف ایک روز کے دوران 37 افراد کی تدفین ہوئی ہے۔بتایا گیا ہے کہ چوبیس گھنٹے میتوں کی تعداد میں 130 فیصد اضافے کا انکشاف ہوا ہے۔

Facebook Comments