عاقب جاوید ٹیم کی مسلسل ہار پر پھٹ پڑے

0 175

لاہور(آئی این پی)پی ایس ایل 5میں مسلسل شکستوں پر لاہور قلندرز کے ہیڈ کوچ عاقب جاوید کو اس وقت کڑی تنقید کا سامنا ہے۔عاقب جاوید نے لاہور قلندرز کی مسلسل تین میچوں میں ہار کی وجہ بتا دی۔کوچ عاقب جاوید کا کہنا ہے کہ ہم باہر بیٹھ کر فیصلے کر سکتے ہیں کہ کس کو کھلانا ہے، اندر فیصلے کھلاڑیوں نے کرنا ہیں، انہیں اسکور بورڈ پر دیکھنا ہے اور اس کے مطابق بیٹسمینوں اور بولروں کو پلان کرنا ہے، یہ کوئی انڈر 15ٹیم نہیں کہ اس کو اسکرپٹ لکھ کر دے دیں اور اندر جا کر پڑھنا شروع کر دیں، یہ سب پروفیشنل ہیں، گیم کو جانتے ہیں، انہیں علم ہے کیا کرنا ہے، ان کے پاس کھیلنے کا 10سے 15برس کا تجربہ ہے، ان کے ساتھ اب ہم گراونڈ کے اندر نہیں جا سکتے اور نہ انہیں ڈکٹیٹ کر سکتے ہیں۔ہیڈ کوچ عاقب جاوید نے کہا کہ فیصلوں کو لے کر باہر بیٹھ کر باتیں کی جا رہی ہیں، فیصلے سوچ سمجھ کر کیے جاتے ہیں کوئی ایک فیصلہ نہیں کرتا، جب کوئی اچھا کھیل جاتا ہے تو کہتے ہیں کہ کیا فیصلہ کیا ہے اور جب کوئی برا کھیل جائے تو کہتے ہیں کہ یہ کیا فیصلہ کیا۔انہوں نے مزید کہا کہ کسی کو بیٹنگ آرڈر میں پرومٹ کریں وہ چل جائے تو واہ واہ فلاپ ہو جائے تو تنقید شروع ہوجاتی ہے، سہیل اختر نے اسلام آباد کے خلاف میچ میں خود کہا کہ اوپر بیٹنگ کرتا ہوں تاکہ رنز ہو ں کیونکہ اس سے پہلے کے میچز میں وہ ٹیل اینڈرز کے ساتھ مل کر رنز کر رہے تھے وہ ردہم میں تھے۔ان کا کہنا تھا کہ پلئیر ڈویلپمنٹ پروگرام پر سارا سال کام کیا جاتا ہے، ان کھلاڑیوں کو موقع بھی ملنا چاہیئے،ہک پلان تو پہلے بن چکا ہوتا ہے، بیٹنگ کے دوران تو کپتان کے کرنے کے لیے کچھ فیصلہ نہیں ہوتے، فیلڈنگ میں اس نے اوورز کی تقسیم کرنا ہوتی ہے وہ اکیلا صحرا میں کھڑا نہیں ہوتا اس کے ارد گرد محمد حفیظ، کرس لین اور ڈیوڈ ویزے جیسے کھلاڑی موجود ہوتے ہیں جو کہ خود بھی کپتان رہ چکے ہوتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ایسے میں کپتانی میں کیا جھول آگیا، جب جیت نہ رہے ہوں تو پھر ہارنے کی وجہ تلاش کی جاتی ہے تو ایک وجہ کپتان کو قرار دے دیا جاتا ہے، حالانکہ ایسا نہیں ہے، وجہ صرف یہی ہے کہ بیٹسمین رنز نہیں کر رہے۔عاقب جاوید نے ٹیم کی کارکردگی کے حوالے سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ ہمارے پاس ٹاپ 8بیٹسمین ہیں، صرف سہیل اختر نے 50کے قریب میچز کھیلے ہوں گے باقی سب کھلاڑی نے 200سے 250تک میچز کھیلے ہوئے ہیں، سب تجربہ کار کھلاڑی ہیں، جب آپ اسکور نہیں کریں گے تو دفاع کیا کریں گے۔عاقب جاوید نے کہا کہ میچز میں آغاز اچھا ملا، جب آغاز اچھا ملا تو مڈل آرڈر بیٹسمینوں نے مومنٹم کو برقرار نہ رکھا، جب مزید آگے لے کر چلنا پڑتا ہے تو بیٹسمین آوٹ ہونا شروع ہو جاتے ہیں، ٹاپ آرڈر کو ہر میچ میں رنز کرنا ہوں گے، ٹاپ آرڈر میں ایک دو ببیٹسمین 70، 80 رنز کریں گے تو آپ 180سے زائد رنز بنانے میں کامیاب ہوں گے، بیٹنگ کا کلک کرنا بہت ضروری ہے۔لاہور قلندرز ہیڈ کوچ عاقب جاوید ٹیم کی مسلسل ہار پر پھٹ پڑے،شکست کا کھلاڑیوں کو ذمہ دار قرار دیدیا

Facebook Comments