کورونا وائرس: چین کا امریکہ پر معاونت کرنے کے بجائے خوف پھیلانے کا الزام

0 95

چین نے امریکہ پر الزام عائد کیا ہے کہ وہ کورونا وائرس کی وبا پر اپنے ردِعمل سے ‘افراتفری’ پھیلا رہا ہے۔
یہ الزام ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب امریکہ نے جمعے کو صحتِ عامہ کی ایمرجنسی نافذ کرتے ہوئے اعلان کیا کہ وہ گذشتہ دو ہفتوں میں چین جانے والے تمام غیر ملکی شہریوں کا اپنی سرزمین پر داخلہ بند کر دے گا۔
چینی وزارتِ خارجہ کی ترجمان ہوا چُنینگ نے کہا کہ امریکی اقدامات ‘صرف خوف و ہراس پھیلائیں گے۔
‘پیر کو ایک نیوز بریفنگ کے دوران وزارتِ خارجہ کی ترجمان نے امریکہ پر الزام لگایا کہ وہ معاونت کی پیشکش کرنے کے بجائے خوف پھیلا رہا ہے، اور کہا کہ یہ چینی مسافروں پر سفری پابندیاں لگانے والا اور اپنے سفارتی اہلکاروں کو جُزوی طور پر وہاں سے نکالنے کا تجویز دینے والا پہلا ملک ہے۔
‘امریکہ جیسے ترقی یافتہ ممالک جن کے پاس وباؤں پر قابو پانے کی زبردست صلاحیت ہے، انھوں نے ہی عالمی ادارہ صحت کی سفارشات کے برعکس سخت تر پابندیاں لگانے میں پہل کی ہے۔
درحقیقت عالمی ادارہ صحت نے خبردار کیا ہے کہ سرحدیں بند کرنے سے اگر مسافر غیر قانونی طریقے سے ممالک میں داخل ہوں، تو وائرس کے پھیلاؤ میں تیزی آ سکتی ہے۔
اب تک چین میں اس وائرس سے 361 افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔
چین کے باہر اب تک اس کے 150 تصدیق شدہ کیسز سامنے آ چکے ہیں جبکہ فلپائن میں ایک شخص کی ہلاکت ہوچکی ہے۔
چین میں کورونا وائرس کے اب تک 17 ہزار کیسز کی تصدیق ہوچکی ہے۔

Facebook Comments