وزیراعظم نے کچھ پیاروں کی خاطرعوام کو مہنگائی کےسونامی کےحوالےکردیاہے۔سینیٹرسراج الحق

0 81

لاہور(صباح نیوز): امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہاہے کہ وزیراعظم نے کچھ پیاروں کی خاطر عوام کو مہنگائی کے سونامی کے حوالے کر دیاہے ۔ حکومت نے ملک کے حال کو بدحال اور مستقبل کو تاریک کردیا ہے۔ تبدیلی پہلے مذاق اور اب خوف کی علامت بن چکی ہے ۔
حکومت بہت جلد ایکسپوز ہوگئی ہے ۔ سرخی پائوڈر اترنے کے بعد اس کا اصل چہرہ عوام کے سامنے آگیاہے ۔ جن لوگوں نے قوم کو ٹرک کی بتی کے پیچھے لگایا تھا ، وہ خود بھی پریشان ہیں۔ وزیراعظم نے کہاتھاکہ 2020 ء خوشخبریوں کا سال ہوگا لیکن اب تک ان کے تمام دعوے الٹ ثابت ہوئے ہیں ۔ مسکراہٹ چور حکومت نے قومی مفادات کو ذاتی مفادات کی بھینٹ چڑھا دیاہے ۔ وزیراعظم گھبرائیں نہیں ، آٹا و چینی کا بحران پیدا کرنے والوں کے نام بتادیں ، قوم اس پر بھی ان کا شکریہ ادا کرے گی ۔ احتساب کے نعرے پر آنے والی حکومت محاسبہ کے ذکر پر سٹپٹا جاتی ہے ۔ وزیراعظم اب بھی چوروں کو نہ چھوڑنے کی بات کرتے ہیں مگر ان کی گفتگو میں پہلے والا دم خم نہیں رہا ۔ پندرہ ماہ میں قرضوں میں 39 فیصد اضافہ ہوا ، حالانکہ وزیراعظم آئی ایم ایف کے پاس جانے سے موت کو گلے لگانا زیادہ بہتر سمجھتے تھے ۔
حکومت نے قرضہ ہی نہیںلیا بلکہ پورا معاشی نظام آئی ایم ایف کے حوالے کر دیا۔ عالمی منڈی میں پٹرولیم مصنوعات کی کمی کے باوجود حکومت نے عوام کو کوئی ریلیف نہیں دیا ۔ وہ وقت اب زیادہ دور نہیں جب عوام حکمرانوں کے گریبانوں میں ہاتھ ڈال کر ان سے اپنی محرومیوں کا حساب مانگ رہے ہوں گے ۔ احتساب کو مذاق بنانے والوں کا اپنا یوم حساب قریب ہے ۔ عظیم بلوچ انقلابی نوجوان تھے جنہوںنے اپنی جوانی اور پوری زندگی اسلامی انقلاب پر نچھاور کر دی ۔عظیم بلوچ اپنے نام کی طرح کردار کے بھی عظیم تھے ۔ ملک میں غلبہ دین کے لیے ان کی خدمات تحریکی کارکنوں کے لیے مشعل راہ ہیں۔
ان خیالات کا اظہار انہوںنے کراچی میں جماعت اسلامی سندھ کے نائب امیر عظیم بلوچ جو گزشتہ ماہ ایک حادثے میں شہید ہو گئے تھے ، کی یاد میں منعقدہ تعزیتی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔ تعزیتی اجتماع سے نائب امراء جماعت اسلامی اسد اللہ بھٹو ، ڈاکٹر معراج الہدٰی صدیقی اور امیر جماعت اسلامی سندھ محمد حسین محنتی نے بھی خطاب کیا۔سینیٹر سراج الحق نے کہاکہ چوروں اور لٹیروں کو پکڑ کر جیلوں میں ڈالنے کے نعرے لگانے والے وزیراعظم آج اتنے بے بس دکھائی دیتے ہیں کہ اپنے ارد گرد موجود آٹا ،شوگر ،ڈرگ اور لینڈ مافیا کے لوگو ں پر ہاتھ ڈالنے سے بھی گھبراتے ہیں ۔
وزیراعظم خود کہتے ہیں کہ وہ آٹا چینی کا بحران پیدا کرنے والوں کو جانتے ہیں مگر ان کو پکڑ نہیں رہے ۔ انہوںنے کہاکہ اگر یہ لوگ اپوزیشن میں ہوتے تو آج جیلوں میں بند ہوتے اور وزیراعظم خود پریس کانفرنس میں ان کے جرائم کی لمبی چوڑی لسٹ عوام کے سامنے لے آتے ۔سینیٹر سراج الحق نے کہاکہ ٹڈی دل کے حملوں نے وزیراعظم سے بد دل کسانوں کو مزید مایوس کردیاہے ۔ حکومت کی طرف سے خوش کن بیانات اور دعوئو ں کے عملی طور پر ٹڈی دل کے حملوں سے بچائو کے لیے کسی بھی قسم کے اقدامات سامنے نہیں آئے ۔
دریں اثنا جمعیت علمائے پاکستان کے صدر صاحبزادہ ابوالخیر ڈاکٹر محمد زبیر نے ادارہ نور حق کراچی میں امیر جماعت اسلامی سینیٹر سراج الحق سے ملاقات کی ۔ ملاقات میں قومی و بین الاقوامی صورتحال اور باہمی دلچسپی کے امور پر تبادلہ خیال ہوا ۔ اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے سینیٹر سراج ا لحق نے کہاکہ حکومت کی غلط پالیسیوں نے عوام کو نان شبینہ کا محتاج بنادیا ہے ۔ حکومت کو ووٹ اور سپورٹ دینے والے سب پریشان ہیں ۔ انہوںنے کہاکہ حکومت مساجد اور مدارس کا کنٹرول چاہتی ہے مگر حکمرانوں کو یاد رکھنا چاہیے کہ مساجد اور مدارس کی طرف بری نیت سے ہاتھ بڑھانے والوں کو ہمیشہ ذلت و رسوائی کا سامنا کرنا پڑا ہے ۔ انہوںنے کہاکہ ملکی مسائل کا اسلامی انقلاب کے علاوہ دوسرا کوئی حل نہیں ۔

Facebook Comments