مہنگائی کرنےوالےایک ایک مافیا کو پکڑیں گے،عمران خان

0 136

کراچی(صباح نیوز): وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ اقربا پروری اور سفارشی کلچر نے اداروں کو کمزوررکردیا ہے، مہنگائی کرنے والے ایک ایک مافیا کو پکڑیں گے ،کسی ڈاکو کو نہیںچھوڑیں گے ، ملک کو قائداعظم اور علامہ اقبال کے وژن کے مطابق بنانا میرا خواب ہے ، ہنر مند پاکستان پروگرام کے تحت جوانوں کو فنی تربیت دی جارہی ہے۔
کراچی میں کامیاب جوان پروگرام کے تحت چیک تقسیم کرنے کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ پروگرام کی لانچنگ پر سب کو مبارکباد دیتا ہوں کامیاب پروگرام وہ پروگرام ہے جس سے ملک بنتے ہیں ہمارا سب سے بڑا اثاثہ نوجوان ہیں اس پر خصوصی توجہ دے رہے ہیں یہ پروگرام نوجوانوں کیلئے ہے۔ پاکستان ہر قسم کے قدرتی وسائل سے مالا مال ہے ۔
کامیاب جوان پروگرام کا مقصد جوانوںکو ان کے پائوں پر کھڑا کرنا ہے ۔ نوجوانوں کی کامیابی سے قومیں کامیاب ہوتی ہیں۔ پروگرام میں جتنا میرٹ اورشفافیت ہوگی اتناہی کامیاب ہوگا جس معاشرے میں میرٹ نہیں ہوتا وہ ترقی کی دوڑ میں پیچھے رہ جاتا ہے ۔ آسٹریلیا میں میرٹ کی وجہ سے وہ سپورٹس اور دیگر شعبوں میں آگے نکل گیا ہے۔ ہمارے ملک میں اللہ تعالیٰ نے بڑا ٹیلنٹ دیا ہے اس کے باوجود ہم دنیا سے مقابلہ نہیں کرسکتے۔بیرون ملک مقیم پاکستانی ہر شعبے میں آگے نکل گئے ہیں اگر ہم چاہیں تو پاکستان میں ہر ادارہ عالمی معیار کا بن سکتا ہے کیونکہ ہمارا سارا پروفیشنل باہر بیٹھے ہیں ۔
پاکستان میں ہم آگے اس لئے نہیں بڑھ سکتے کیونکہ یہاں اداروں میں میرٹ نہیں ہے ہمارا سسٹم میرٹ کو فروغ نہیں دیتا ۔ ہم اقرباپروری اور سفارشی کلچر کی وجہ سے پیچھے رہ جاتے ہیں۔ ہمارے ادارے مضبوط نہیں ہوتے۔60 کی دہائی میں پاکستان کی بیورو کریسی عالمی معیار کی تھی اس لئے ہمارا ملک آگے بڑھ رہا تھا کیونکہ اس وقت سول سروسز کا تگڑا امتحان ہوتا تھا جس میں بہترین ٹیلنٹ اوپر آجاتا تھا جیسے جیسے ہم میرٹ سے پیچھے گئے ہمارا ملک پیچھے چلا گیا ۔ اس پروگرام کی کامیابی تب ہوگی جب قرضے میرٹ پر دئیے جائیں گے ۔ اس میں ہم اپنے پرائے میںکسی قسم کا امتیاز نہیں کریں گے ۔
شوکت خانم پاکستان کا کامیاب ترین ہسپتال ہے ۔ نمل یونیورسٹی اعلیٰ معیار کی بن چکی ہے وہاں سے ڈگری لینے والے 95 فیصد نوجوانوں کونوکریاں مل جاتی ہیں کیونکہ وہاں میرٹ ہے۔ شوکت خانم میرٹ پر چلتا ہے ۔ یہ پروگرام بھی جتنا میرٹ پر چلے گا بڑا کامیاب ہوگا۔ وزیراعظم نے کہا کہ نوجوانوں کے اندر جنون اور لگن ہوتی ہے جوملک کو آگے لے جاتا ہے۔ اس سے پہلے ہم نے ہنر مند پروگرام شروع کیا اس کے تحت جوانوں کو فنی تربیت دی جارہی ہے ان کو وہ ہنر سکھائے جن کی وجہ سے وہ اپنے خاندانوں کو بھی خوشحال کردیں گے ۔
نوجوان اثاثے پر ہم جتنا پیسہ خرچ کریں گے اتنا ہی فائدہ ہوگا ۔ ہم نے پاکستان کی تاریخ میں سب سے زیادہ سکالر شپ دی ہیں ۔ ہم 50ہزار سکالر شپ دے رہے ہیں۔ پاکستان دنیا میںدوسری بڑی نوجوان آبادی کا ملک ہے۔ یمن کی سب سے بڑی نوجوان آبادی ہے اس کے بعد پاکستان کا نمبر ہے۔ نوجوان ہماری طاقت ہے اس پر پورا زور لگائیں گے ۔ پاکستان جب عظیم ملک بنے گا تو اس میں نوجوانوں کا ہاتھ ہوگا ۔ چین نے 30 سال میں 70کروڑ غریب لوگوں کو غربت سے نکالا اس کی وجہ سے آج چائنا کہاں سے کہاں پہنچ گیا ہے۔ جہاں ایک چھوٹا طبقہ امیر ہو اور باقی غریب ہوں تو وہ ملک ترقی نہیں کرسکتا۔
ملک تب ترقی کرتا ہے جب ملکی دولت کونچلے طبقے پر خرچ کیا جاتا ہے ۔ احساس پروگرام ہمارا بڑا پروگرام ہے جس پر پاکستان کی تاریخ میں سب سے زیادہ 200ارب روپے خرچ کررہے ہیں ۔ یہ پروگرام نچلے طبقے کیلئے ہے۔ وزیراعظم نے کہاکہ میں نے زندگی میں جو بھی خواہش کی وہ اللہ تعالیٰ نے پوری کی میں نے ناممکن کو ممکن بنایا۔ زندگی میں 2 کینسر ہسپتال بنائے ہیں اب تیسرا کراچی میںبنارہے ہیں ۔ نمل یونیورسٹی دیہات میں پہلی نجی یونیورسٹی ہے جب میں نے سیاست میں آنے کا فیصلہ کیا تو سب نے میرا مذاق اڑایا ۔
15 سال تک مذاق ہوتا رہا۔ لوگ کہتے تھے عمران کامیاب نہیں ہوگا دو پارٹیوں میں تیسری پارٹی نہیں آسکتی اللہ نے اس میں بھی کامیاب کیا اب میرا آخری خواب یہ ہے کہ پاکستان کو وہ عظیم ملک بنائوں جو قائداعظم اورعلامہ اقبال کا خواب تھا ۔ انشاء اللہ اس میں بھی کامیابی ملے گی میں مانتا ہوں اس وقت مشکل وقت ہے یہ قوم کی آزمائش کا وقت ہے۔ دنیا کا سب سے عظیم اور کامیاب انسان ہمارے نبیۖ تھے نوجوانو ، ان کی زندگی سے سیکھو۔ قرآن میں ہر چیز انسانوں کی بہتری کیلئے ہے۔ اللہ تعالیٰ نے نبیۖ کو13 سال بڑی آزمائش سے گزرا پھر ان کو مدینہ کی ریاست دی ۔5 سال مدینہ کی ریاست میںمشکل ترین وقت آیا۔
آپۖ نے مدینہ کی ریاست دنیا میں ایسی چھوڑی جس نے دنیا کی تاریخ بدل دی۔ مدینہ کی ریاست اپنی مثال آپ ہے ہم نے آپۖ کی زندگی میں یہ سیکھا ہے کہ زندگی میں اونچ نیچ ہوتی ہے اچھے برے وقت آتے ہیں کامیاب انسان برے وقت سے سیکھتے ہیں۔ آج سے 50 سال پہلے جو قوم اوپر جارہی تھی ہم کیوں پیچھے رہ گئے ۔ بنگلہ دیش بھی ہم سے آگے نکل گیا کیونکہ ہم غلط راستے پر نکل گئے تھے۔ جب ہم اصلاحات کرتے تو تھوڑا وقت لگتا ہے جس طرح مدینہ کی ریاست نبیۖ کے پاس آئی تو ان کو وقت لگا ۔
ہم نے ان کی زندگی سے سیکھنا ہے کیا جب ان پر مشکل وقت آیا تو انہوں نے ہاتھ کھڑے کردئیے ہیں۔ انہوں نے اپنی قوم کو تربیت دی کہ مشکل وقت زندگی کا ایک حصہ ہے۔ اس سے گھبراتے نہیں ہیںہمارے کئی لوگ گھبرا جاتے ہیں گھبرانا نہیں چاہیے۔ میں اپنی ٹیم کو بھی کہتا ہوںگھبرایا نہ کرو کابینہ اجلاس میںکئی وزیروں کو گھبرائے دیکھتا ہوں ان کی شکلیں اتری ہوئی ہوتی ہیں کہ لوگ مہنگائی پر رورہے ہیں ہم مہنگائی کرنے والے ایک ایک مافیا کو پکڑیں گے۔ ہم اس ملک کو بدلیں گے ۔نوجوانو ۔ ہمت نہیںہارنا شوکت خانم ہسپتال کیلئے بچوں نے میرے ساتھ مل کر فنڈ اکٹھے کیے آپ دیکھیں گے کہ کس طرح پاکستان دنیا کا عظیم ترین ملک بنے گا۔ اس سے قبل وزیراعظم نے کامیاب جوان پروگرام کے تحت جوانوںمیںچیک تقسیم کیے۔

Facebook Comments