جماعت اسلامی کے تحت یوم یکجہتی کشمیر بھرپور انداز میں منایا گیا

0 128

اسلام آباد،لاہور ،کراچی ،پشاور،کوئٹہ(صباح نٰٰیوز): جماعت اسلامی پاکستان کے زیراہتمام5فروری یوم یکجہتی کشمیر اس عزم کے اظہار کے ساتھ منایا گیا کہ کشمیر کی آزادی تک چین سے نہیں بیٹھیں گے ۔ کشمیر پاکستان کی شہ رگ اور ہمارے لیے زندگی اور موت کا مسئلہ ہے ۔ پاکستانی قوم کشمیریوں کے شانہ بشانہ اور قدم بقدم ساتھ ہے ۔ وفاقی و صوبائی دارالحکومتوں سمیت ملک بھر میں ضلعی و زونل مقامات پر کشمیریوں کے ساتھ یکجہتی کے اظہار کے لیے بڑی بڑی عوامی ریلیاں اورمظاہرے کیے گئے جن سے امیر جماعت اسلامی سینیٹر سراج الحق ،سیکرٹری جنرل امیر العظیم ،لیاقت بلوچ ، ڈاکٹر فرید احمد پراچہ ، راشد نسیم ، اسد اللہ بھٹو ،میاں محمد اسلم ،عبدالغفار عزیز ،مولانا عبدالحق ہاشمی، اظہراقبال حسن جاوید قصوری ، حافظ نعیم الرحمن سمیت قائدین جماعت نے خطاب کیا ۔

امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کراچی میں کشمیریوں کے ساتھ اظہا ر یکجہتی کے لیے نکالی گئی ریلی سے خطا ب کرتے ہوئے  وزیر اعظم ،چیف آف آرمی اسٹاف اور اہل اقتدار و اختیار سے مطالبہ کیا ہے کہ کشمیر کی آزادی کے لیے اب عملی اقدامات کریں ،پاکستان کی فوج پاکستان کے لیے ہے ،قوم کا مطالبہ ہے کہ وہ کشمیریوں کے لیے آگے بڑھے ، پور ی قوم ان کی پشت پر کھڑی ہوگی ،حکمران دورنگی اور منافقت چھوڑ کر اور امریکہ کی طرف دیکھنے کے بجائے سلطان ٹیپو بن کر جہاد کا اعلان کریں ،مسئلہ کشمیر کے حل کے لیے او آئی سی کا اجلاس اسلام آباد یا مظفر آباد میں بلایاجائے ،اقوام متحدہ اپنی قراردادوں کے مطابق کشمیریوں کے استصواب رائے کا حق دلوائے ،اہل کشمیر اور پوری کشمیری قیادت خراج تحسین کی مستحق ہے جو بدترین ریاستی جبر و تشدد کے باوجود آزادی کی جدوجہد میں مصروف ہے ، آج اہل کراچی اور بالخصوص خواتین مبارکباد کی مستحق ہیں جنہوں نے 20کلومیٹر طویل انسانی ہاتھوں کی زنجیر بناکر اہل کشمیر کو یہ پیغام دیا ہے کہ پوری قوم کشمیریوں کے ساتھ ہے ۔سینیٹر سراج الحق نے کہاکہ حکومت جہاد کا اعلان کرے ۔ حکمرانوں کو کشمیر کی آزادی کے لیے عملی اقدامات اٹھانا ہوں گے۔

جب تک انڈین آرمی کشمیر سے بھاگ نہیں جاتی یا کشمیر کے گلی کوچے ہندو فوجیوں کا قبرستان نہیں بن جاتے، کشمیری پیچھے نہیں ہٹیں گے۔۔ اگر دنیا خطے میں امن چاہتی ہے اسے کشمیریوں کو حق خود ارادیت دیناہوگا ۔ اقوام متحدہ اپنی قرار دادوں پر عملدرآمد کو یقینی بنائے ۔ چھ ماہ سے کشمیری محصور ہیں ۔ کشمیریوں میں صبر کا پیمانہ لبریز ہو گیاہے دنیا ساتھ دے نہ دے ہم کشمیریوں کا ساتھ نہیں چھوڑیں گے ۔ ہم خون کے آخری قطرے تک کشمیریوں کے ساتھ ہیں ۔ عوام اپنے کشمیری بھائیوں سے اظہار یکجہتی کے لیے ملک بھر میں سڑکوں پر نکل آئے ہیں ۔ کشمیر دنیا میں سب سے بڑا قید خانہ بن چکاہے جس میں 80 لاکھ انسان قید ہیں ۔سیکرٹری جنرل جماعت اسلامی امیرالعظیم نے جماعت اسلامی لاہور کے زیراہتمام مال روڈ پر ہونے والے بڑی عوامی مظاہرے سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ 185 دنوں سے کشمیر بھارتی درندہ صفت فوج کے بدترین محاصرے میں ہے ۔ کشمیر کا ہر گھر ہسپتال اور قبرستان بنا ہوا ہے ۔ تعلیمی ادارے ، ہسپتا ل اور تمام کاروبار بند ہیں ۔ ہم کشمیریوں کی استقامت اور جدوجہد کو سلام پیش کرتے ہیں ۔ 73 سال سے کشمیریوں نے ہر طرح کے ظلم و جبر اور تشدد کا ڈٹ کر مقابلہ کیا اور نسل د رنسل لاکھوں شہادتوں کا نذرانہ پیش کیا ۔

اقوام متحدہ کا چارٹر کہتاہے کہ یہ حق خود ارادیت کے لیے سب سے بڑی قربانی ہے جو کشمیری عوام نے دی ہے مگر افسوس ہے کہ اقوام متحدہ سمیت عالمی برادری اس پر مجرمانہ خاموشی اختیار کیے ہوئے ہے ۔یہ برصغیر کی تقسیم کا نامکمل ایجنڈاہے ۔ غیر ت ملی سے محروم ہمارے حکمرانوں نے لاکھوں کشمیریوں کے قاتل بھارت کو اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کا رکن بنانے کے لیے ووٹ دیا ۔ یہ حکمران کشمیر کے مظلوم مسلمانوں کے نہیں ، بھارت کے ظالم مودی کے دوست ہیں ۔ ان حکمرانوں کو مودی کے منشور اور کشمیر میں کھیلے جانے والے موت کے کھیل کا پتہ تھا مگر یہ کہتے رہے کہ مودی الیکشن جیت گیا تو کشمیر کا مسئلہ حل ہو جائے گا جبکہ مودی نے کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کر کے اسے بھارتی ریاست قرار دے دیا۔ نائب امیر جماعت اسلامی لیاقت بلوچ نے پشاور میں کشمیر ریلی سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ ٥ فروری یکجہتی کشمیر کو قاضی حسین احمد مرحوم کے وژن اور قومی قیادت اور عوام کے اتفاق سے قبولیت ملی ۔ مقبوضہ کشمیر میں تحریک آزادی کشمیریوں کی آزادی اور حق خود ارادیت کے حصو ل کے پختہ یقین اور لازوال قربانیوں کی وجہ سے ہے۔ مقبوضہ کشمیر کے حالات آج پہلے سے کہیں زیادہ قومی قیادت کی اتفاق رائے سے قومی کشمیر پالیسی کا تقاضا کر رہے ہیں ۔مضبوط اور حق پر مبنی موقف و اقدامات کی ضرورت ہے ۔

یکجہتی کشمیر کا عملی اقدام یہی ہو سکتاہے کہ پاکستان میں سیاسی و اقتصادی ، سماجی اور انتظامی انتشار ختم کیا جائے ۔ انہوں نے کہاکہ وزیراعظم عمران خان مسئلہ کشمیر پر تقاریر ، موقف کے اظہار اور بے روح پر جوش باتوں سے باہر آئیں ۔ قومی کشمیر پالیسی کے لیے قومی قیادت کو متحد کریں ۔ سفارتی محاذ پر مودی سے توقعات کے بعد ٹرمپ سے امیدیں نہ لگائی جائیں ۔ سفارتکاری کا موثر روڈ میپ بنایا جائے ۔ جہاد فی سبیل اللہ کی عملی تیاری ہونی چاہیے ۔انہوں نے کہاکہ ملائیشیا سربراہی کانفرنس کا بائیکاٹ بڑی غلطی تھی ،وزیراعظم عمران خان نے اپنے اقدام سے پاکستان کے لیے ذلت و رسوائی اور بے اعتباری کا سودا کیا ، اس کا ازالہ یہی ہے کہ یہ کانفرنس پاکستان میں منعقد کی جائے ۔ نائب امیر جماعت اسلامی ڈاکٹر فرید احمد پراچہ نے لیہ میں یکجہتی کشمیر ریلی سے خطاب کرتے ہوئے کہاہے کہ بھارت کشمیر پر ظالمانہ قبضہ زیادہ دیر برقرار نہیں رکھ سکتا ۔ کشمیر سے جس دن کرفیو اٹھے گا ، پوری کشمیری قوم باہر نکل آئے گی ۔ کشمیری اب زیادہ دیر فوجی محاصرے کو بھی برداشت نہیں کریں گے ۔ آزادی کشمیریوں کا مقدر ہے جسے وہ ہر حالت میں حاصل کر کے رہیں گے ۔نائب امیر جماعت اسلامی و سابق ممبر قومی اسمبلی میاں محمد نے اسلم وفاقی دارالحکو مت اسلام آباد میں کراچی کمپنی کے مقام پر جلسہ عام سے خطاب کر تے ہو ئے کہاکشمیر پاکستان کی شہ رگ ہے جسے دشمن نے دبوچ رکھا ہے جب تک کشمیر آزاد نہیں ہو تا ہماری جدو جہد اور تحریک جاری رہے گی ،ملک کے مجموعی حالات سے لگ رہا ہے کہ ہمارے حکمرانوں ، اداروں اور سیاسی جماعتوں نے کشمیر کو پس پشت ڈال دیا ہے186دن سے 80لاکھ لوگوں نو لاکھ سے زائد فوج نے قید کر رکھا ہے ،کشمیر ی حیران ہیں کہ ہمارے پشتیبان پاکستان کے حکمران ہمارے ساتھ ہیں یا مودی کے ساتھ ہیں ، میاں محمد اسلم نے کہا ہمار ی خارجہ پالیسی بُری طر ح ناکام ہو چکی ہے اور ہمیں خارجہ پالیسیوں کے محاذ پر دنیا بھر میں شر مندگی کا سامنا ہے ،

ہمارا مطالبہ ہے کہ مسئلہ کشمیر کے دنیا بھر میں ابلاغ اور سفارت کاری کے لیے نائب وزیر خارجہ کا تقرر کیا جا ئے کیو نکہ کشمیر کی آزادی ہمارے لیے زندگی اور موت کا مسئلہ ہے اور ضرورت اس بات کی ہے کہ مسئلہ کشمیر پر پوری قومی قیادت کو متحد کیا جا ئے ۔فیصل آباد میں چنیوٹ بازار سے گھنٹہ گھر چوک تک نکالی گئی کشمیر ریلی کی قیادت نائب امیر جماعت اسلامی راشد نسیم ، صوبائی نائب امیر سردار ظفر حسین اور ضلعی امیر عبدالعظیم رندھاوا نے کی ۔

ریلی سے خطاب کرتے ہوئے راشد نسیم نے کہاکہ کشمیر کی آزادی کے لیے جماعت اسلامی کی جدوجہد اور قربانیوں کی پوری قوم معترف ہے ۔ سید علی گیلانی 90 سالہ بزرگ آج بھی بھارتی عزائم کے سامنے سب سے بڑی رکاوٹ بنے ہوئے ہیں مگر افسوس یہ ہے کہ عالمی استعمار کے غلام حکمران کشمیریوں کے ساتھ بے وفائی کررہے ہیں ۔انہوںنے کہاکہ ملک و ملت کے مسائل جماعت اسلامی جیسی دیانتدار جماعت ہی حل کر سکتی ہے قوم نے تمام پارٹیوں کو بار بار آزما کر دیکھااور ہر بار دھوکہ کھایا اب عوام کے پاس جماعت اسلامی کے علاوہ دوسرا کوئی آپشن نھیں ۔ جماعت اسلامی پاکستان کو حقیقی معنوں میں ایک اسلامی فلاحی ریاست بنانے کی جدوجہد کر رہی ہے ۔نائب امیرجماعت اسلامی پاکستان و سابق رکن قومی اسمبلی اسداللہ بھٹو نے سکھر و شکارپور میں یوم یکجہتی کشمیرریلیوں سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ مودی نے اقوام متحدہ کی گیارہ قراردادوں اورشملہ معاہدے سمیت بین الاقوامی معاہدوں کی خلاف ورزی کرتے ہوئے کشمیرکی ریاستی حیثیت کوتبدیل کیا ہے،لہذا وہ بین الاقوامی مجرم ہے۔

اس لیے حکومت پاکستان کا فرض ہے کہ وہ مودی کو بین الاقوامی ناپسندیدہ شخصیت قراردلانے اورکشمیرمیں حقوق انسانی کی شدیدخلاف ورزی وقتل عام کے جرم کا مقدمہ عالمی عدالت انصاف میں داخل اورمودی کو اس میں بلاکر کیفرکردار تک پہنچایاجائے،آج کراچی تا چترال شہرشہر جلوس وریلیاں اس بات کی واضح دلیل ہے کہ پوری قوم کے دل اپنے کشمیری بھائیوں کے ساتھ دھڑکتے ہیں،مگردوسری جانب حکومتی بے حسی افسوس ناک ہے وزیراعظم عمران خان کی نریندر مودی کے خلاف دوٹوک بات نہ کرنے سے مسئلہ کشمیر کے حوالے سے عوام کے اندر شکوک وشبہات بڑھ رہے ہیں،قوم وزیراعظم کی میٹھی تقریرنہیں بلکہ بھارت کے خلاف زوردار ودیرینہ ،موقف کا مطالبہ کرتے ہیں،اسداللہ بھٹو نے مزید کہا کہ ہمیں امریکی صدرٹرمپ کی ثالثی کی ہرگزضرورت  نہیں ہے،ٹرمپ اورمغربی دنیا اقوام متحدہ کی قراردادوں پرعمل کرکے بھارت پردبا ئوڈال کر کشمیریوں کو حق خودارادیت دلائیں۔امیر جماعت اسلامی پنجاب وسطی محمد جاوید قصوری نے سا ہیوال میں مظاہرہ سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کشمیر الحاق پاکستان اور تقسیم برصغیر کا ادھورا ایجنڈا ہے۔کشمیر پاکستان کی شہ رگ ہے۔اسکی آزادی تک جنوبی ایشیا میں امن قائم نہیں ہو سکتا۔پاکستان کے سارے دریا کشمیر کی وادیوں سے نکل کر پاکستان کی زمینوں کو سیراب کرتے ہیں۔عالمی برادری انڈیاکے جارحانہ عزائم کانوٹس لے۔ بلااشتعال گولہ باری اور پاکستان میں تخریب کاری کے واقعات نے بھارت کے مکروہ چہرے کو بے نقاب کردیا ہے۔

جب تک بھارت کو اس کی جارحیت اورہٹ دھرمی کامنہ توڑ جواب نہیں دیاجائے گاوہ باز آنے والا نہیں۔سیاسی وعسکری قیادت بھارت کے خلاف سخت کاروائی کرے پوری قوم ان کے ساتھ کھڑی ہے۔بلال قدرت بٹ نے شیخوپورہ میں بڑے احتجاجی مظاہرے سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اب وقت آگیا ہے کہ بھارت کے کشمیر میں گھنائونے مظالم،پاکستان میں دہشتگردانہ کاروائیوں اور آبی جارحیت کوپوری دنیا کے سامنے اجاگر کیاجائے۔آج ملک کابچہ بچہ دفاع وطن کی خاطر متحد ہے۔ہندوستان نے جنگ مسلط کی تو اس کے زخم بھارت پرکئی عشروں تک تازہ رہیں گے۔جنوبی ایشیا میں بھارتی چوہدراہٹ کسی صورت میں بھی قابل قبول نہیں۔ بھارت کو اینٹ کاجواب پتھر سے دیاجاناچاہئے۔وہ مسلسل پاکستان کی سرحدوں کی خلاف ورزی کررہا ہے۔جب تک کشمیر کاپرامن حل اور بھارت برابری کی سطح پر پاکستان کے وجود کوتسلیم نہیں کرتا اس کے ساتھ نہ تودوستی ہوسکتی ہے اور ہی تجارتی منصوبے پایہ تکمیل تک پہنچ سکتے ہیں۔ امیرجماعت اسلامی شمالی پنجاب ڈاکٹرطارق سلیم نے سرگودھا میں یکجہتی کشمیر ریلی سے خطاب کرتے ہوئے کہاہے کشمیرکے غیوربیٹوں نے اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کرکے ہندوستان کا بھیانک چہرہ پوری دنیا کے سامنے بے نقاب کرکے اپنا حق اداکیا، لیکن پاکستانی حکمران اپنی ذمہ داریاں پوری نہیں کررہے کشمیری ان کی دوچارمنٹ کی خاموشی نہیں عملی مددچاہتے ہیں۔

پوری قوم اورسیاستدان، یکجہتی کشمیرڈے پرتمام سیاسی اختلافات بھلا کرکشمیری عوام سے اظہاریکجہتی کے لیے متحد ہیں، کشمیر اقوام متحدہ کی قراردادوں سے نہیں ہندوکی مرمت سے آزاد ہوگا ۔امیر جماعت اسلامی جنوبی پنجاب رائو محمد ظفر نے ملتان میں کشمیریوں کے ساتھ اظہار یکجہتی کے لیے نکالی گئی بہت بڑی ریلی کی قیادت کی ۔ شرکائے ریلی سے خطاب کرتے ہوئے انہوںنے کہاکہ کشمیر تکمیل پاکستان کا نامکمل ایجنڈا ہے اس ایجنڈے کی تکمیل کی خاطر کشمیری اپنی جانوں کے نذرانے پیش کر رہے ہیں ۔ کشمیرکی آزادی پاکستان کی بقا کے لیے ضروری ہے ۔ حافظ نعیم الرحمن نے کہاکہ اہل کراچی نے شاہراہ فیصل پر طویل زنجیر بناکر کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کیا ہے اور تاریخ رقم کی ہے ، کشمیر میں مسلمانوں پر ظلم کی انتہا کردی گئی ہے ،مودی اور آر ایس ایس کے غنڈے کشمیریوں پر زندگی تنگ کررہے ہیں ، اہل کشمیر کے لیے عالم اسلام کے حکمرانوں کی ذمہ داری ہے کہ ہر طرح سے مدد کریں ،پوری امت کو ایک اور متحد ہونے کی ضرورت ہے اور حکمرانوں کو بھی مجبور کرنا پڑے گا کہ وہ کشمیریوں کے لیے زبانی جمع خرچ کرنے کے بجائے آگے بڑھیں ۔امیر جماعت اسلامی لاہور ذکر اللہ مجاہد نے کہاکہ حکمران اتنے بے بس ہیں کہ کشمیر ی بیٹیوں بہنوں اور مائوں کی عصمتیں تار تار کرنے والے ہندو ستان کو اقوا م متحدہ میں سلامتی کونسل کا ممبر بننے کے لیے ووٹ دیا گیا ۔

اگر ایٹم بم اور میزائلوں کے ڈھیر ہماری بیٹیوں کی حفاظت نہیں کر سکتے تو ایسے اسلحہ کو سمندر برد کردینا چاہیے ۔حکمرانوں نے بھارت سے تجارت بند کی نہ سفارتی تعلقات ختم کیے بلکہ پاکستان کے راستے ہونے والی بھارت او رافغانستان کی تجارت بھی بند نہیں کی ۔ بزدل حکمران جنگ سے جتنا بچ رہے ہیں ، بھارت کے حملے اتنے ہی بڑھ رہے ہیں ۔ حکمرانوں نے کشمیر پر سودے بازی نہیں کی تو گزشتہ چھ ماہ میں انہوںنے قوم کو کشمیر کی آزادی کے لیے کیا لائحہ عمل دیا ۔ ہم کشمیر کی آزادی کی جدو جہد کو آخری دم تک جاری رکھیں گے ۔ ریلی سے مرکزی جمعیت اہلحدیث کے رہنما علامہ ابتسام الٰہی ظہیر نے بھی خطاب کیا ۔ ڈپٹی سیکرٹری جنرل جماعت اسلامی اظہر اقبال حسن نے بہاولپور میں یکجہتی کشمیر ریلی سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ ملائیشیا کانفرنس میں شرکت نہ کر کے حکمرانوں نے حقیقت میں کشمیر کی عالمی حمایت کھو دی ہے ۔ کشمیریوں کے ساتھ ظلم ہورہاہے وہ تو بھارت کے مقابلے میں ڈٹے ہوئے ہیں جبکہ پاکستانی حکمرانوں کی ٹانگیں بلاوجہ کانپ رہی ہیں ۔ حکمران ابھی تک امریکہ کے ساتھ امید یں لگا کر بیٹھے ہوئے ہیں ۔

ٹرمپ سے ثالثی کی امید لگانا خود فریبی اور کشمیر کاز کو شدید نقصان پہنچانے کے مترادف ہے ۔امیرجماعت اسلامی سندھ وسابق رکن قومی اسمبلی محمدحسین محنتی نے حیدرآباد اور نواب شاہ میں یوم عزم آزادی کشمیرریلیوں سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ مسئلہ کشمیرکا واحد حل جہاد ہے،72سالوں سے مذاکرات جاری ہیں مگر کوئی نتیجہ نہیں نکلا۔بھارت نے اقوام متحدہ کی قراردادوں پرعمل کرنے کی بجائے کشمیرکو دنیا کا سب سے بڑا جیل خانہ بناکر80 لاکھ کشمیریوں کی زندگی تنگ کردی ہے اس لیے کشمیر دعائوںسے نہیں بھارت کی مرمت سے آزادہوگا۔ دنیااس وقت تک ہماری مددنہیں کریگی جب تک پاکستان خودمذمت اوربیانات سے آگے نہیں بڑھے گا۔انھوں نے کہاکہ کراچی سے چترال تک پوری قوم اپنے کشمیری بھائیوں سے اظہاریکجہتی کررہی ہے کشمیر ی عوام 5اگست سے لاک ڈائون کاشکارہیں بچے بوڑھے،مردوخواتین ہر ایک بھارت کے بدترین مظالم کاشکارہے وہاں عزت ،جان ،مال کسی کاکچھ محفوظ نہیں ہے جب تک ہم کشمیر کے لیے اٹھیں گے نہیں ،کشمیر آزاد نہیں ہوگااوردنیابھی ہماری مدد اسی وقت کرے گی جب ہم خودآگے بڑھیں گے۔انھوں نے مزیدکہاکہ کشمیری تکمیل پاکستان کی جنگ لڑرہے ہیں ہمیں بھی اس جنگ کواپنی جنگ سمجھناہوگااور سری نگر اور مقبوضہ وادی میں جگہ جگہ یہ جنگ اہل کشمیر کے شانہ بشانہ لڑناہوگی۔

Facebook Comments