اوپینین میکرز اور نیشنل پریس کلب اسلام آباد کے زیر اہتمام فری میڈیکل کیمپ

0 122

اسلام آباد(چنگیز خان جدون) اوپینین میکرز اور نیشنل پریس کلب اسلام آباد کے زیر اہتمام فری میڈیکل کیمپ ، سینکڑوں صحافیوں ، بچوں اور فیملیزکی شرکت ،93 فیصدصحافی ہائپرٹینشن ، بلڈ پریشر اور ذہنی دباﺅ کا شکار پائے گئے ۔ تفصیلات کے مطابق اوپینین میکرز اور نیشنل پریس کلب کے فری میڈیکل کیمپ میں بی ویل ہسپتال بلیو ایریا اسلام آبادکے ماہر اور سینئر ڈاکٹروں ڈاکٹر طاہرہ بتول ، ڈاکٹر شازیہ شرف ، ڈاکٹر غزالہ ممتاز، ڈاکٹر ابرار غوری ، ڈاکٹر قیصر اور دیگر گائنی، امراض قلب، ڈینٹل سرجن ، ماہر نفسیات ،میڈیکل اسپیشلسٹ سمیت مختلف شعبوں کے ڈاکٹروں نے صحافیوں ، ان کے اہلخانہ اور بچوں کا مفت طبی معائنہ کیا اور اس کے ساتھ ساتھ راولپنڈی اسلام آباد کے صحافیوں کی صحت کی صورتحال کے حوالے سے تحقیقی رپورٹ بھی تیار کی گئی ، تھنک ٹینک ادارے اوپینین میکرز کی طرف سے جاری کردہ رپورٹ کے مطابق چیک اپ کرانے والے 93 فیصد سے زائد صحافی ذہنی دباﺅ، بلڈ پریشر ، ہائپر ٹینشن ڈپریشن ، شوگر اور دیگر امراض کا شکار پائے گئے جبکہ صحافیوں کے 70 فیصد بچوں میں خوف ، تشدد ، محرومی اور نفسیاتی دباﺅ کے اثرات پائے گئے ،اوپینین میکرز کی تحقیقاتی رپورٹ میں تجویز کیا گیا کہ صحافی حضرات روز مرہ کی پیشہ ورانہ ذمہ داریوں کے ساتھ ساتھ ہنسنے ، قہقے لگانے ، دوستوں کے ساتھ آزادانہ ماحول میں گپ شپ کرنے،کتابوں کے مطالعے اورفلمیں دیکھنے اور سیرو سیاحت کیلئے وقت نکالیں ،اوپینین میکرز کی تحقیقاتی رپورٹ میں صحافیوں کوکہا گیا کہ اپنے بچوں کو کچھ وقت دینے کی طرف توجہ دیں اور بچوں کو جرائم پرمبنی ویڈیو گیمز ، خوف دلانے والی فلموں اور ڈراموں سے بچائیں اور بچوں کو آﺅٹ ڈور گیمز کی طرف راغب کریں جس سے ان کی جسمانی صحت پر مثبت اثرات مرتب ہوں لیکن ان کی دوستیوں پر کڑی نظر رکھیں۔ اس موقع پر پی ایف یو جے کے سابق صدر افضل بٹ نے کہا کہ ڈاکٹروں کے طبی معائنے کے بعد اوپینین میکرز کی جاری کردہ تحقیقاتی رپورٹ ہوش رباہے اس پر توجہ دینے کی ضرورت ہے ، انہوں نے کہا میڈیا ورکرز پر دباﺅ کے اثرات سامنے آنا شروع ہو گئے ہیں ، نیشنل پریس کلب کے جنرل سیکرٹری انور رضا اور آر آئی یو جے کے سابق صدر اور فری میڈیکل کیمپ کے روح رواں علی رضا علوی نے کہا کہ صحافیوں کو اوپینین میکرز کی تحقیقاتی رپورٹ پر توجہ دیتے ہوئے اپنے لئے بھی وقت نکالنا چاہئے انہوں نے کہا ہمیں لگتا ہے کہ میڈیا انڈسٹری میں بے روزگاری ، جبری برطرفیاں اورتنخواہوں میں تاخیر ان امراض کی بنیادی وجوہات ہیں حکومت اور میڈیا مالکان کو اپنے ورکرز کی صحت پر توجہ دینی چاہئے ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

Facebook Comments